Regarding zakaah

21 May 2019 Ref-No#: 1746

Assalamu alaikum. I have gold jewellery gifted by my parents at my wedding. I haven’t paid zakaah on it for many years now and I intend to pay it all ASAP. My husband has always been working in software development companies untill few years back when he got a job to work in an IT field of a riba based bank. I never took heed if he is earning halal and I did not know much about riba. But later when I came to know about these matters, I spoke to him regarding that and it turned out even he was unaware. Now he is trying on and off to seek a halal job but hasn’t been successful yet. My question is I have to pay zakaah for all these years and it is a big amount and I don’t have money, so is it permissible for me to take money from him(earned by working for a bank) to pay my zakaah? Or should I sell some of my gold and pay from that money? This gold is my property..so it is my responsibility to pay zakaah on it and I know my husband is not compelled to pay that zakaah for me. So can I take that money from him to pay zakaah as a gift or help by him to me? Jazaakallah khairan.

Answer

Wa’alaykum as Salam wa rahmatullahi wa barakatuhu,

We commend you for your caution in earning Halal. May Allah reward you.

Since a bank has numerous sources of income, your husbands income will be Halal. As for whether he will be sinful for doing the job, it will depend on whether he is directly assisting with the interest transactions, or whether his duties do not directly assist with any Haram.

Having said that, it is best that he still try to seek alternate employment.

You may loan funds from him and discharge your Zakah.

References

Working in an interest-based bank

Software of companies that sell Haram

http://askimam.org/public/question_detail/39732

 

 

ولو آجر نفسه ليعمل في الكنيسة ويعمرها فلا بأس به؛ إذ ليس في نفس العمل معصية  (المحيط البرهاني في الفقه النعماني – 5/ 362)

بینک کی ملازمت کا تفصیلی حکم

    در  اصل بینک کی ملازمت نا جائز ہونےکی دو وجہیں ہو سکتی ہیں،ایک وجہ یہ ہے کہ یہ ہے کہ ملازمت میں سود وغیرہ کے نا جائز معاملات میں اعانت ہے،دوسرے یہ کہ تنخاہ حرام مال سے ملنے کا احتمال ہےان میں سے پہلی وجہیں یعنی حرام کاموں میں مدد  کا جہاں  تک تعلق ہے،شریعت میں مدد کے مختلف درجے ہیں،ہر درجہ حرام نہیں،بلکہ صرف وہ مدد ناجائز ہےجو براہ راست  حرام کام میں ہوں،مثلا سودی معاملہ کرنا،سود کا معاملہ لکھنا،سود کی رقم وصول کرنا وغیرہ-لیکن اگر براہ راست سودی معاملہ میں انسان کو ملوث نہ ہونا  پڑے، بلکہ اس کام کی نوعیت ایسی ہو جیسے  ڈرائیور،چپراسی،یا جائز ریسرچ وغیرہ تو اس میں چونکہ براہ راست مدد نہیں ہے،اس لئے اس کی گنجا ئش ہے-

جہاں تک حرام  مال سے تنخاہ ملنے کا تعلق ہے، اس کے بارے مین شریعت کا اصول ہے کہ اگرایک مال جلال وھرام سے مخلوط ہو اور حرام مال زیادہ ہو تو اس سے تنخواہ یا ہدیہ لینا ناجائز  نہیں، لیکن اگر حرام مال کم ہو تو جائز ہے-بینک کا  صورت حال  یہ ہے کہ اس کا مجموعی مال کئی چیزوں سے مرکب ہوتا ہے،1-اصل سرمایہ2-ڈپازیٹرز کے پیسے3-سود اور حرام کاموں کی آمدنی،4-جائز خدمات کی آمدنی،اس سارے مجموعے میں صرف نمبر3 حرام ہے،باقی کو حرام نہیں کہا جا سکتا، اور چونکہ ہر بینک میں نمبر 1 اور نمبر دو کی کثرت ہوتی ہے،اس لئے یہ نہیں کہہ سکتے کہ مجموعہ غالب ہے،لہذاکسی جائز کام کی تنخاہاس سے وصول کی جاسکتی ہے-

یہ بنیاد ہےجس کی بناٰء پرعلماء نے یہ فتوی دیا ہے کہ بینک کی ایسی ملازمت جس میں خود کوئی حرام کام کرنا نہ پڑتا ہو، جائز ہے، البتہ احتیاط اس سے بھی اجتناب کیا جائے- (فتاوی عثمانی – 3/396)

ویب سایٹ پر اشتہار کلک کرنے کی اجرت لینا:

اگر شرط کے مطابق یہ معاملہ نا جائز باتوں سے متعلق ہو…..تو گناہ پر تعاون کی وجہ سے یہ عمل جائز نہ ہو گا (کتاب النوازل / 12   290)

بینک کي ملازمت اس لۓ ناجائز ہے کہ اکثر اوقات یہ سودي لین دین میں تعاون ہوتا ہے اور سودي معاملات میں تعاون بھي جائز نہيں جب کہ گورنمنٹ کي دوسري ملازمتوں میں ملازمت کرنے والوں کا سود لینے اور دینے والوں سے کوئي تعلق  نہیں ہوتا اس لۓ بینک کي ایسي ملازمت جس میں سودي کاروبار کے لکھنے یا لینے اور دینے میں تعاون ہوتا ہو جائز نہیں ہے اور دوسري سرکاري ملازمتیں جن میں براہ راست کسي حرام کا ارتکاب نہ ہوتا ہو جائز ہیيں (کتاب الفتاوی5   410/ )