Inquire about interest money

17 May 2019 Ref-No#: 1711

Aslam o alikum..

Sir I have very important questions to ask about use of interest money…
I work in restaurant where I have to give 1 riyal on every 100 riyals of sales I do as a tip share to company. Means if I do 3000 sales I have to give 30 riyals every day whether I get from guest any tips or not….
U can say that it’s punishment for me that I have to give 30 riyals fine daily.
Even when I joined this company they didn’t tell me anything about this rule of taking tip share
Now can I use interest money to pay this tip share….
I will never ever use interest money for my own use.. Can I pay this tip share by this interest.

Answer

Wa’alaykum as Salam wa rahmatullahi wa barakatuhu,

It is not permissible to accrue any Haram money. You should not be earning any interest.

However, if you already have interest money, you may use those funds to pay these oppressive charges.

References

حکومت کی طرف سے جو محصول لۓ جاتے ہیں ان کی دو قسمیں ہیں: ایک وہ محصول جس کے عوض ہمیں کوئی راحت یا فائدہ پہنچایا جاتا ہے، مثلا روڈ ٹیکس، پانی ٹیکس، یا راستے گلی کوچے کی صفائی کے لۓ میونسپل ٹیکس وغیرہ لیا جاتا ہے، ان اخراجات کے پورا کرنے کے لۓ ہمیں تعاون کرنا ضروری ہے، اس لۓ اس میں سود کی رقم دینا ذاتی مفاد میں استعمال کرنے کے برابر ہے- دوسرا وہ محصول جو شرعا ناجائز، ظلم اور جبر وتشدد ہے، لیکن غیر اسلامی حکومت ہونے کے سبب قانونا ادا کرنا پڑتا ہے، مثلا انکم ٹیکس، چنگی نا کے، ایسے ناجائز ٹیکس میں بینک کے سود کی رقم دی جاۓ تو اس کی شرعا گنجائش ہے-(فتاوی دینیہ  – جلد 4  / ص 196)