Consulting work to Banks/Financial Institutions

29 Sep 2018 Ref-No#: 1019

Dear Mufti sab – I am a freelance consultant in the field of finance and related services, the nature of my work is such that I am registered with few recruitment agencies, from time to time these agencies send me to various clients to do certain work, the duration of the work is normally 3-6 months sometimes it does get extended as well to few more months but never for over a year. For this work I get paid by the recruitment agencies based on the rates which I agreed with them at the time of starting a contract. The recruitment agencies are in turn being paid by the clients to which I render my services.
From time to time these recruitment agencies ask me to do work at various banks and financial institutions, normally that work does not involve directly in booking of the interest or interest calculations, the nature of the work offered to me has been:
– checking compliance with the local regulations or with accounting standards,
– checking if the controls are designed and operating properly in various divisions e.g. investment division, HR division, treasury division etc.
– helping with the financial statements compilation
– impact assessment on the organisation of the Brexit etc.
My question is:
a) since the nature of my work is not permanent
b) I am employed effectively by the recruitment agency as they pay me into my bank account and I sign contract with them
c) the work in question does not involve directly dealing with the interest transactions i.e. booking, validating or facilitating of the interest, or even at time if it is it a small proportion of the total work/task
based on the above am I allowed to work on such short term contracts?

Jazak Allah ho khair!

Answer

Wa’alaykum as Salam wa rahmatullahi wa barakatuhu,

Since the work which you do for the banks does not have anything to do with their interest dealings or Haraam transactions, your income will be permissible. It is permissible for you to work on such contracts.

References

_______________

بینک کی ملازمت کا تفصیلی حکم

    در  اصل بینک کی ملازمت نا جائز ہونےکی دو وجہیں ہو سکتی ہیں،ایک وجہ یہ ہے کہ یہ ہے کہ ملازمت میں سود وغیرہ کے نا جائز معاملات میں اعانت ہے،دوسرے یہ کہ تنخاہ حرام مال سے ملنے کا احتمال ہےان میں سے پہلی وجہیں یعنی حرام کاموں میں مدد  کا جہاں  تک تعلق ہے،شریعت میں مدد کے مختلف درجے ہیں،ہر درجہ حرام نہیں،بلکہ صرف وہ مدد ناجائز ہےجو براہ راست  حرام کام میں ہوں،مثلا سودی معاملہ کرنا،سود کا معاملہ لکھنا،سود کی رقم وصول کرنا وغیرہ-لیکن اگر براہ راست سودی معاملہ میں انسان کو ملوث نہ ہونا  پڑے، بلکہ اس کام کی نوعیت ایسی ہو جیسے  ڈرائیور،چپراسی،یا جائز ریسرچ وغیرہ تو اس میں چونکہ براہ راست مدد نہیں ہے،اس لئے اس کی گنجا ئش ہے-

جہاں تک حرام  مال سے تنخاہ ملنے کا تعلق ہے، اس کے بارے مین شریعت کا اصول ہے کہ اگرایک مال جلال وھرام سے مخلوط ہو اور حرام مال زیادہ ہو تو اس سے تنخواہ یا ہدیہ لینا ناجائز  نہیں، لیکن اگر حرام مال کم ہو تو جائز ہے-بینک کا  صورت حال  یہ ہے کہ اس کا مجموعی مال کئی چیزوں سے مرکب ہوتا ہے،1-اصل سرمایہ2-ڈپازیٹرز کے پیسے3-سود اور حرام کاموں کی آمدنی،4-جائز خدمات کی آمدنی،اس سارے مجموعے میں صرف نمبر3 حرام ہے،باقی کو حرام نہیں کہا جا سکتا، اور چونکہ ہر بینک میں نمبر 1 اور نمبر دو کی کثرت ہوتی ہے،اس لئے یہ نہیں کہہ سکتے کہ مجموعہ غالب ہے،لہذاکسی جائز کام کی تنخاہاس سے وصول کی جاسکتی ہے-

یہ بنیاد ہےجس کی بناٰء پرعلماء نے یہ فتوی دیا ہے کہ بینک کی ایسی ملازمت جس میں خود کوئی حرام کام کرنا نہ پڑتا ہو، جائز ہے، البتہ احتیاط اس سے بھی اجتناب کیا جائے-

فتاوی عثمانی(3/396) مکتبہ دار العلوم کراچی

ہاں بینک میں وہ شعبے جو سود سے متعلق نہیں ہے مثلا بینک میں چپراسي باورچي درائيونگ جاروب کشي وغیرہ کي ملازمت جائز اور درسست ہے اور تنخوااہ بھي حلال ہے

فتاوی دار العلوم زکریا (673/5) 

Tags: